گرمی میں رنگ بدل کر سولر سیل بن جانے والی ’’ذہین کھڑکی‘‘

29

کولوراڈو: امریکی محکمہ توانائی کی ماتحت ’’نیشنل رینیوایبل انرجی لیبارٹری‘‘ (این آر ای ایل) میں ماہرین نے ایک ایسی ’’ذہین کھڑکی‘‘ ایجاد کرلی ہے جو زیادہ گرمی میں اپنا رنگ بہت تیزی سے بدل کر خود کو شمسی (سولر) سیل میں تبدیل کرلیتی ہے اور بجلی بنانے لگتی ہے۔

سولر پینلز سے بجلی بنانے میں یہ نسبتاً نئی ٹیکنالوجی ’’تھرموکرومک فوٹو وولٹائک‘‘ کہلاتی ہے جو کچھ سال پہلے ہی متعارف ہوئی ہے۔ تازہ پیش رفت میں اسی ٹیکنالوجی کو خاصا بہتر بنایا گیا ہے۔

بتاتے چلیں کہ نہ سولر سیل کوئی نئی ایجاد ہے اور نہ ہی تیز روشنی یا گرمی میں رنگ بدلنے والے شیشے کوئی نئی چیز ہیں۔ البتہ ان دونوں پرانی ٹیکنالوجیز کو یکجا کرکے ایسی کھڑکیوں کی تیاری ایک نئی پیش رفت ضرور ہے، جن کی رنگت درجہ حرارت بڑھتے ہی نہ صرف تبدیل ہوجاتی ہے بلکہ وہ دھوپ سے بجلی بنانے کے قابل بھی ہوجاتی ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.