مریخ پر مکان بنانے والا تعمیراتی میٹریل مل گیا

270

سائنس دانوں کو ایسے کیمیکلز کا پتہ چل گیا ہے جو مریخ پر مضبوط عمارات کی تعمیر میں معاون بن سکتا ہے۔ اس کی مدد سے مریخ پر تعمیرات ممکن بنائی جاسکتی ہیں۔

ناسا اور سنگاپور کے کچھ سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ   قاطین (chitin) نامی پولیمر کی مدد سے مریخ پر آلات اوررہائش گاہیں بنائی جا سکتی ہیں۔ یہ کوئی مشکل کیمسٹری نہیں ہے۔

قاطین دنیا بھر میں متعدد جانوروں کی جلد میں پایا جاتا ہے،مچھلیاں اور کیڑے مکوڑے اس مرکب کا اہم ذریعہ ہیں۔مردہ کیڑوں مکوڑوں سے بھی حاصل کردہ پولیمر کی مدد سے نیا مرکب بنایا جا سکتا ہے۔

دنیا میں اس کی کوئی کمی نہیں۔ اس پولیمر کی خاص بات یہ ہے کہ یہ مریخ کی آب و ہوا کے مطابق آلات سازی میں استعمال کیا جا سکتا ہے، اس سے مریخ کی  زمین‘ پر مکان یا مکانات بھی بنائے جاسکتے ہیں۔ ناسا کی ایک رپورٹ کے مطابق یہ ایک پائونڈ کیمیکل مدار میں پہنچانے پر 10 ہزار ڈالر خرچ ہوں گے۔