پاکستان میں گراس روٹ لیول ہاکی کب شروع ہوگی؟

257

لاہور: گراس روٹ ہاکی کا سٹرکچر اس وقت تین بنیادی یونٹس پر کھڑا ہے۔ کلب ہاکی، اکیڈمی ہاکی اور سکول لیول کی ہاکی۔ ان تینوں سطحوں پر اگر دیکھا جائے تو پاکستان کی ہاکی کی صورت حال انتہائی ناگفتہ بہ ہے۔

جس طرح یورپ میں سینکڑوں کی تعداد میں کلبز ہیں اس طرح پاکستان میں ہاکی کے کلبز نہیں ہیں۔ لاہور جیسے بڑے شہر میں جب شہباز سینئر کے دور میں کلبوں کی سکروٹننگ کی گئی تو اس وقت معلوم ہوا کہ کلبوں کی تعداد 40 ہے اس میں سے بھی کئی بوگس کلب تھے۔

پاکستان میں بوگس کلب بہت بڑی تعداد میں ہیں ۔ برائے نام کلبوں نے ووٹ کیلئے اپنی باڈی بنائی ہوئی ہے اور عملاً کچھ نہیں۔ حتیٰ کہ پی ایچ ایف کی کانگرس میں بھی بوگس ممبرشپ کی شکایات سامنے آ چکی ہیں۔

اکیڈمی کی بات کی جائے تو پنجاب کے چند علاقوں فیصل آباد، وہاڑی، بورے والا، گوجرہ اور لاہور میں چند اچھی اکیڈمیاں ہیں۔ سندھ میں بھی اکیڈمیاں کام کر رہی ہیں لیکن ان کی تعداد نہ ہونے کے برابر ہے، جس لیول پر کام ہونا چاہیے وہ نہیں ہو رہا۔

اب اگر سکول لیول کی ہاکی کی طرف آتے ہیں تو وہ حکومتی لیول کا کام ہے۔ جب سے اٹھارویں ترمیم کے ذریعے کھیل صوبائی حکومت کو منتقل ہوئے ہیں صوبائی وزیر تعلیم، صوبائی وزارت کھیل اور پی ایچ ایف کو مل کر اس طرف توجہ کرنا چاہیے تھی کہ ہاکی کو سکول لیول پر عام کیا جائے۔