مقبوضہ کشمیر کی پہلی خاتون ‘ریپر’

404

وادی کشمیر یوں تو کئی حوالوں سے دنیا بھر میں مقبول ہے، تاہم اب وہاں کی ایک نوجوان ‘ریپر’ کی وجہ سے بھی مقبوضہ کشمیر کا نام دنیا بھر میں مقبول ہو رہا ہے۔

مقبوضہ کشمیر کے شہر سری نگر سے تعلق رکھنے والی 19 سالہ ‘ریپر’ مہک اشرف کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ وہ وادی جنت نظیر کی پہلی خاتون ریپر ہیں۔

مہک اشرف نے اس وقت ‘ریپر’ گلوکاری کا آغاز کیا جب وہ نویں جماعت کی طالبہ تھیں۔

مہک اشرف نے امریکی ‘ریپر’ و موسیقار ‘امینم’ کی کہانی اور جدوجہد سے متاثر ہوکر اپنا نام بھی ‘منائم ام’ رکھا ہے۔

19 سالہ مہک اشرف المعروف منائم ام اس وقت گورنمنٹ ویمن کالج سری نگر سے بیچلر کی تعلیم حاصل کر رہی ہیں، تاہم اب تک وہ پوری وادی سمیت پاکستان و بھارت میں اپنی منفرد گلوکاری کی وجہ سے مقبول ہو چکی ہیں۔