آسٹریا میں شدت پسندوں سے منسلک درجنوں ٹھکانوں پر پولیس کی کارروائی

280

ویانا: آسٹرین پولیس نے مبینہ طور پر شدت پسندوں سے منسلک 60 سے زائد مقامات پر چھاپہ مارا اور لاکھوں یورو نقدی ضبط کرلی جبکہ 30 مشتبہ افراد سے پوچھ گچھ کے احکامات بھی جاری کردیے گئے۔

یہ کارروائی ایسے وقت میں سامنے آئی جب ایک ہفتے قبل ہی عسکریت پسند گروہ داعش کے ایک سزا یافتہ حامی نے ویانا کے وسطی علاقے میں فائرنگ کرکے 4 افراد کو ہلاک کردیا تھا۔

تاہم استغاثہ کا کہنا تھا کہ چھاپے اس حملے سے منسلک نہیں ہیں۔

وزیر داخلہ کارل نہمیر نے کہا کہ پولیس کارروائی کا مقصد ’شدت پسندی کی جڑوں کو کاٹنا‘ تھا۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا کہ ‘ہم اپنی پوری قوت کے ساتھ ان مجرمان، انتہا پسندوں اور غیر انسانی تنظیموں کے خلاف کارروائی کر رہے ہیں‘۔

آسٹریا کے جنوبی علاقے میں قائم ریاست اسٹیریا کی استغاثہ کے دفتر نے کہا ہے کہ ’وہ 70 سے زائد مشتبہ افراد اور متعدد انجمنوں کے خلاف تحقیقات کررہے ہیں جن پر شبہ ہے کہ ان کا تعلق دہشت گرد تنظیم اخوان المسلمون اور حماس تنظیم سے ہے اور وہ اس کی حمایت کرتے ہیں‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’30 مشتبہ افراد کے بارے میں انہیں فوری طور پر پوچھ گچھ کے لیے پیش کرنے کے احکامات دے دیے گئے ہیں‘۔

انہوں نے کہا کہ ’اس آپریشن کا 2 نومبر کے ویانا میں ہونے والے دہشت گردی کے واقعے سے کوئی تعلق نہیں ہے بلکہ یہ ایک سال سے زیادہ عرصے تک کی گہری اور جامع تحقیقات کا نتیجہ ہے‘۔ ’