جب میزبان جو بائیڈن کی فتح پر نشریات کے دوران آبدیدہ ہوگئے

224

صدارتی انتخاب میں 4 روز تک جاری رہنے والی غیریقینی صورتحال اور سخت مقابلے کے بعد ڈیموکریٹک اُمیدوار جو بائیڈن مطلوبہ 270 سے زائد الیکٹورل ووٹ حاصل کرنے کے بعد ملک کے 46ویں صدر منتخب ہوگئے۔

جو بائیڈن کے صدر اور کمالا ہیرس کے ملک کی پہلی خاتون نائب صدر بننے کے اعلان کے بعد جہاں امریکا بھر کی سڑکوں پر شہریوں کی ایک بڑی تعداد جشن مناتی دکھائی دی وہیں جو بائیڈن کے امریکا کےے 46ویں صدر کے انتخاب کے اعلان کے بعد امریکی نشریاتی ادارے سی این این کے میزبان وان جونز نشریات کے دوران آبدیدہ ہوگئے۔

جب صحافی اینڈرسن کوپر نے ڈیموکریٹ امیدوار کی فتح پر انہیں تاثرات بیان کرنے کا کہا تو وانز جونز روتے ہوئے بولے کہ ‘ میں صرف چاہتا ہوں کہ میرا بیٹا یہ دیکھے’۔

جب سی این این نے انتخاب میں جو بائیڈن کی کامیابی کا اعلان کیا تو وان جونز بہت زیادہ جذباتی ہوگئے تھے، انہوں نے رونا شروع کردیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ انہوں نے کہا کہ آج صبح والدین ہونا آسان ہے، باپ ہونا آسان ہے، اپنے بچوں کو یہ بتانا آسان ہے کہ کردار اہمیت رکھتا ہے، یہ اہمیت رکھتا ہے۔

وان جونز نے مزید کہا کہ سچ کہنا، اچھا بننا اہمیت رکھتا ہے اور اب یہ بہت سے لوگوں کے لیے آسان ہے۔

امریکی میزبان نے کہا کہ ‘ اگر اس ملک میں آپ مسلمان ہیں، تو آپ کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ہے کہ صدر کو آپ کا یہاں ہونا پسند نہیں’۔

اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ‘ اگر آپ تارکین وطن ہیں تو آپ کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں کہ صدر اس بات پر خوش ہوگا کہ آپ سے آپ کا بچہ چھین لیا جائے، یا لوگوں کی آنکھوں سے خواب چھین کر انہیں کسی وجہ کے بغیر واپس بھیج دے’۔