غدار نواز شریف جواب تم نے دینا ہے ، جنرل باجوہ نے نہیں!

210

یہ پاکستان کی بدقسمتی ہے یا پاکستانی عوام کی بدقسمتی ہے کہ پاکستان میں کیسے کیسے حکمران عوام پر مسلط ہو گئے، تین دفعہ کا وزیراعظم رہنے والا شخص کس قدردھوکے باز اور خودغرض نکلا کہ شاید دنیا میں اس کی مثال مشکل سے ملے گی، نواز شریف نے پی ڈی ایم کے جلسے میں جو گوجرانوالہ میں تقریر کی وہ احسان فراموشی اور بدمعاشی کا مکمل بیانہ تھا، کیسا وزیراعظم کہاں کا وزیراعظم وہ تو را کا ایجنٹ بول رہا تھا، مودی کا یار بول رہا تھا، اسرائیلی ایجنٹ بول رہا تھا، جس بے شرم کو یہ احساس نہیں تھا کہ وہ کس کا نام لیکر بول رہا ہے اور کہہ کیا رہا ہے اور کس کے لئے کہہ رہا تھا، یہ ملک اگر قائم اور دائم ہے تو وہ صرف فوج کی وجہ سے ہے اس ملک کی سالمیت کی ضامن فوج ہے، فوج کے جوان روزانہ شہید ہورہے ہیں، چند دن پہلے بھی بیس سے زیادہ جوانوں کی شہادت ہوئی، راء کے ایجنٹوں نے گھات لگا کر دو جگہ پر حملہ کیا، نواز شریف اس مودی کی زبان بول رہا ہے، فوج کے سربراہ کو نام لیکر للکار رہا ہے، اس کو یہ احساس نہیں کہ یہ ملک فوج کے دم سے قائم ہے، ورنہ اس جیسے غدار ملک کو بیج چکے ہوتے، اس کے بڑے بھائی زرداری نے امریکی فوج کو دعوت دی تھی کہ وہ آ کر اس کی حکومت کوبچائے، یہ غدار نواز شریف مودی کواپنی نواسی کی شادی میں بلاتا ہے، روس جب کانفرنس میں جاتا ہے تو کشمیر کاذکر ہی مشترکہ اعلانیہ سے نکال دیا جاتا ہے، اس غدارِ وطن نواز شریف نے آج تک کلبھوشن یادو کا نام کسی بھی فورم پر نہیں لیا بلکہ صحافیوں کے سوال پر ادھر ادھر کی باتیں کرنے لگ جاتا ہے، کیسا فوج دشمن حکمران اس ملک پر ۳ مرتبہ مسلط ہوا، ایک کہاوت ہے کہ وہ عظیم مائیں ہوتی ہیں جو عظیم اور ملک سے محبت کرنے والوں کو جنم دیتی ہیں، میں تو یہ کہوں گا کہ کیسی بدنصیب ہے وہ ماں جس نے اس جیسے ملک دشمن اور غدارِوطن کوجنم دیا، جس نے ملک کو لوٹا، بائیس کروڑ عوام کو لوٹا، ملک کو کنگال بنا دیا، اپنا گھر بھر لیا، بیٹوںکی لندن میں اربوں کی جائیدادیں بنا دی وہ باہر بیٹھ کر عیش کررہے ہیں اور بھگوڑے ہیں، عدالت نے ان کے وارنٹ جاری کئے ہوئے ہیں۔
نواز شریف پر آرٹیکل 6لگنا چاہیے، جو ملک کے راز افشاء کرنے کی دھمکی دیتا ہے، فوج کے سربراہ کو گالیاںدیتا ہے، بھارت جاتا ہے تو حریت کانفرنس کے سربراہوں سے نہیں ملتا ہے بلکہ جندال سے اس کے گھر جا کر ایک ملک کا وزیراعظم ہونے کے باوجود ملتا ہے، اپنے بیٹے کو اس سے ملاتا ہے، یہ تھا ملک کا بزنس مین وزیراعظم جو مال کمانے کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتا تھا، عوام غریب سے غریب تر ہوتے گئے یہ امیر سے امیر تر ہوتا گیا، نواز شریف نے جو زبان وزیراعظم عمران خان کے خلاف استعمال کی اور جنرل باجوہ پر جس طرح الزامات کی بوچھاڑ کی وہ بہت خطرناک اور خوفناک الزامات تھے، ایسا معلوم ہوتا تھا غدار بول رہا ہے، ایک بھارتی ایجنٹ بول رہا ہے، ذرا سی بھی اس میں غیرت اور شرم نہیں تھی، وہ ہر آرمی چیف سے اپنے دور میں لڑا اور ہمیشہ آرمی چیف پر دبائو رکھا لیکن خود ضیاء الحق کی گود میں پل کر جوان ہوا، چند دن پہلے اعجاز الحق نے بتایا کہ یہ نوٹوں سے بھرا بیگ ان کے گھر چھوڑ گیا تھا جس کو میں نے فوراً اپنی والدہ کے کہنے پر واپس کیا، چھانگا مانگا کی سیاست اس نے شروع کی، صحافیوں کو اس نے خریدنا شروع کیا، میر شکیل الرحمن اسی کے دئیے ہوئے پلاٹوں کے چکر میں گرفتار ہیں اور ان کو رہائی نہیں مل رہی ہے، جنرل راحیل شریف چاہتے تو اقتدار پر قبضہ کر سکتے تھے لیکن انہوں نے ایسا نہیں کیا بلکہ ایک سال پہلے ہی اعلان کر دیا تھا کہ وہ ایکسٹیشن نہیں لیں گے، غدار وطن نواز شریف اب تمہارا وقت ختم ہو گیا ہے، پاکستان کے بائیس کروڑ عوام اپنی فوج کے ساتھ کھڑے ہیں، تم جیسے بھارتی ایجنٹ اور مودی کے یار کو اس ملک کی سالمیت سے کھیلنے کی اجازت نہیں دی جائے گی، پورا ملک اپنے جوانوں کیساتھ کھڑا ہے، تم نے اپنے مفاد کی خاطر اس ملک کی فوج پر حملہ کیا جس کا تم کو حساب دینا ہو گا، اب تم سیاست کو بھول جائو، باقی زندگی جیل میں گزارو، تمہاری نانی بیٹی بھی جو سزا یافتہ مجرم ہے سیاست بھول جائے، اس کی زندگی بھی جیل میں گزرے گی، پاکستانی عوام کیلئے کرپشن سے پاک پاکستان وجود میں آرہا ہے۔جس میں تم جیسے غدار ملک دشمنوں کی کوئی جگہ نہیں ہے۔