نامحرم خاتون سے ہاتھ نہ ملانے پر مسلمان کو جرمن شہریت نہ دینے کا فیصلہ

247

یورپی ملک جرمنی کی صوبائی عدالت نے لبنانی نژاد مسلمان ڈاکٹر کو ایک نامحرم خاتون سے ہاتھ نہ ملانے کی سزا کے طور پر شہریت نہ دینے کا فیصلہ سنا دیا ہے۔

جرمنی کے صوبے بارٹن ورٹمبرگ کی عدالت نے لبنانی نژاد 40 سالہ ڈاکٹر کی درخواست پر 17 اکتوبر کو فیصلہ سنایا۔

عدالت نے اگرچہ واضح طور پر یہ نہیں کہا کہ لبنانی نژاد مسلمان ڈاکٹر کو جرمن شہریت نہ دی جائے تاہم عدالت نے کہا کہ مذکورہ شخص کو خاتون سے ہاتھ نہ ملانے کے باعث شہریت نہیں دی جانی چاہیے۔

مذکورہ عدالت میں درخواست لبنانی نژاد ڈاکٹر نے ہی دی تھی، جسے 2015 میں بارٹن وٹمبرگ کے دارالحکومت اشٹٹ گارٹ شہر کی عدالت نے شہریت نہ دینے کا فیصلہ دیا تھا۔

اشٹٹ گارٹ کی عدالت نے مسلمان ڈاکٹر کو خاتون سے ہاتھ نہ ملانے کی سزا کے طورپر شہریت دینے سے انکار کیا تھا، جس پر انہوں نے صوبائی عدالت سے رجوع کیا تھا مگر صوبائی عدالت نے بھی شہری عدالت کے فیصلے کی حمایت کی۔

لبنانی نژاد مسلمان ڈاکٹر نے عدالت کو بتایا کہ وہ اپنے مذہب کی وجہ سے نہ صرف خواتین بلکہ مرد حضرات سے بھی ہاتھ نہیں ملاتے، تاہم عدالت نے ان کے ریمارکس ماننے سے انکار کیا۔