افغانستان کا حکمران کون ہے؟ جنگی جرائم کی تحقیقات سے قبل عالمی عدالت کا استفسار

208

دی ہیگ: بین الاقوامی فوجداری عدالت (آئی سی سی) نے افغانستان میں ہونے والے سنگین جرائم کی تحقیقات دوبارہ شروع کرنے کے لیے استغاثہ کی درخواست دینے یا نہ دینا کا فیصلہ کرنے سے قبل اس بات کی وضاحت طلب کی ہے کہ افغانستان میں حکمران کون ہے۔

ہیگ میں قائم ٹربیونل کے نئے پراسیکیوٹر نے گزشتہ ہفتے افغانستان میں تحقیقات دوبارہ شروع کرنے کے لیے کہا کہ وہ طالبان اور عسکریت پسند اسلامک اسٹیٹ خراسان گروپ پر توجہ مرکوز کریں گے۔

گزشتہ برس آئی سی سی نے کابل میں حالیہ مہینوں میں معزول ہونے والی حکومت کے کہنے کے بعد انکوائری روک دی تھی کہ وہ خود جنگی جرائم کے الزامات کی تحقیقات کرنے کی کوشش کرے گی۔

آئی سی سی کے پری ٹرائل ججوں نے کہا کہ چیمبر سمجھتا ہے کہ یہ ایک باخبر فیصلہ کرنے کی پوزیشن میں ہےاور اس وقت افغانستان کی نمائندگی کرنے والے حکام کی شناخت کے حوالے سے قابل اعتماد اور تازہ ترین معلومات حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔

ججز نے کہا کہ پری ٹرائل چیمبر نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل اور عدالت کی ریاستوں کی جماعتوں کے بیورو سے درخواست کی کہ وہ اس وقت افغانستان کی نمائندگی کرنے والے حکام کی شناخت کے بارے میں معلومات جمع کرائیں۔