افغان معیشت‘ جنگ اور بھوک!!!

323

(گذشتہ سے پیوستہ)
افغانستان میں ’’ پراکسی اشرافیہ‘‘ کی اصطلاح کو غلط قرار دینے والوں کا کہنا ہے کہ بیس سال پہلے وہاں طالبعلموں کی تعداد چھ لاکھ تھی جو اب تین کروڑ سے زیادہ ہے اسی طرح دو عشرے قبل وہاں اساتذہ کی تعداد 3500 تھی جو اب ڈھائی لاکھ کے لگ بھگ ہے انکا کہنا ہے کہ آج افغانستان کی نصف سے زیادہ آبادی نوجوانوں پر مشتمل ہے اور یہ سب سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہیں وہ یہ بھی کہتے ہیں کہ طالبان کے پہلے دور حکومت میںتین چوتھائی ملک میں بجلی نا پید تھی جب کہ اب نصف سے زیادہ ملک کو چوبیس گھنٹے بجلی ملتی ہے یہ سب دلائل یقینا یہ ثابت کرتے ہیں کہ افغانستان میں گذشتہ بیس برسوں میں ایک سول سوسائٹی بھی قائم ہوئی ہے اور معاشرے میں ایک تبدیلی بھی آئی ہے مگر اب سوال یہ ہے کہ اس سول سوسائٹی کا مستقبل کیا ہے اور اس میں سے کتنے اپنے ملک میں رہنا چاہتے ہیں درحقیقت اس افغان اشرافیہ کا مستقبل ایک جنگی اکانومی کیساتھ جڑا ہوا تھا جسکے ختم ہوتے ہی یہ چمکتی دمکتی عمارت زمین بوس ہو گئی امریکہ نے اگر افغان معیشت کی بنیاد جدید زراعت‘ صنعت‘ تجارت‘ تعمیرات‘ کاروباری اداروں اور آئی ٹی انڈسٹری پر رکھی ہوتی تو کسی کو بھی جہازوں سے لٹک کر ملک چھوڑنے کی ضرورت پیش نہ آتی امریکہ اگر اس قسم کی مضبوط معیشت کی داغ بیل ڈال دیتا تو پھر اسکی فوج کو مترجم‘ کنٹریکٹر‘ ڈرائیور‘ کلرک اور افغان نیشنل آرمی کیلئے فوجی کہاں سے ملتے پھر تو ہر کسی نے ملازمت یا کاروبار کر کے دو وقت کی روٹی کماناتھی پھر کسی کو کیا ضرورت تھی کہ وہ طالبان سے دشمنی مو ل لیکر امریکی فوج میں ملازمت کرتا دراصل ایک مصنوعی معیشت اور ایک پراکسی اشرافیہ تخلیق کرنا امریکہ کی مجبوری تھی اور افغانستان وہ پہلا ملک نہیں جہاں امریکہ نے اس قسم کی بے بنیاد معیشت کی داغ بیل ڈالی اس سے پہلے وہ یہی تجربے کوریا‘ فلپائن ‘ کیوبا‘ ویت نام‘ ہیٹی‘ گرینیڈا‘ ال سیلواڈور اور لاطینی امریکہ کے دیگر ممالک میں کر چکا ہے حملہ آور ملک اگر ایک مصنوعی معیشت کا ڈول نہ ڈالے تو اسکی ملازمت کون کریگا اسکی بندوق کون اٹھائے گا اور اسکے جہازوں سے لٹک کر اپنا ملک چھوڑنے کی کوشش کون کرے گا اور اس سے بھی بڑھ کر یہ کہ لوگ جب عمارتیں‘ شاہراہیں‘ پل‘ اسپتال‘ سکول اور پاور پلانٹ بنتے ہوئے دیکھتے ہیں تو وہ بیرونی حملہ آوروں کے گرویدہ ہو جاتے ہیں وہ یہ نہیں دیکھتے کہ یہ تعمیرو ترقی صرف بڑے شہروں میں ہو رہی ہے اس قسم کی عارضی ترقی کے جو فوائد ہمیںنظر آرہے ہیں ان سے انکار نہیں کیا جا سکتا مگر انکا مستقبل کیا ہے
افغانستان میں ترقی اور تنزلی کا یہ مدو جزر پہلی مرتبہ نہیں آیا محمد ظاہر شاہ جو افغانستان کا آخری بادشا تھا اسنے 1933 سے 1973 تک حکومت کی وہ 226 سال پر محیط افغان بادشاہو ں کے خاندان(Dynasty) کا آخری بادشاہ تھا اسکے دور کی تعمیر و ترقی کا احوال بیان کرتے ہوے یورپی یونین کی پارلیمنٹ کے ممبر Mick Wallace نے کہا کہ اسوقت افغانستان کی یونیورسٹیوں میں خواتین طالبعلموں کی تعداد نصف کے لگ بھگ تھی‘ اس وقت کے افغانستان میںخواتین ڈاکٹروں کی تعداد چالیس فیصد تھی ‘ خواتین اساتذہ کی تعداد ستر فیصد تھی اور تیس فیصد سرکاری ملازمین خواتین تھیںMick Wallace نے یورپی یونین کی پارلیمنٹ میں کہا کہ نیٹو ممالک نے اگر بیس برس میں اس ملک کی پانچ یا سات فیصد خواتین کو تعلیم اور ملازمتیں دلوا دیں تو اسکے باوجود یہ تعداد سوویت یونین کے حملے سے پہلے کے افغانستان میں خواتین کی نمائندگی سے بہت کم ہے اور یہ مہمل اور مضمحل ترقی ہمیں اس بات کا حق نہیں دیتی کہ ہم افغانستان کی خواتین کے حقوق پر ہنگامہ کھڑا کر دیں مک والس نے اس دھواں دھار خطاب میں کہا کہ امریکہ نے وہاں 2.2 کھرب ڈالر خرچ کئے جس میں سے دو کھرب میں سے کچھ جنگ پر لگے اور باقی کے سب امریکی کمپنیاں لے اڑیںاس نے پوچھاکہ کیا ہمیں آج تک یہ پتہ چل سکا کہ اس جنگ میں یورپی یونین کے ممالک نے کتنا خرچ کیا اس نے کہا کہ ہم البتہ اتنا ضرور جانتے ہیں کہ یورپی کمپنیوں نے بھی اس جنگ میں خوب مال بنایا مک والس نے پوچھا Do we have anything to show for it یعنی جو پیسہ ہم نے لگایا اسکے عوض کیا کچھ دکھانے کیلئے ہمارے پاس ہے
یورپی یونین کے علاوہ امریکہ میں بھی آج پوچھا جا رہا ہے کہ یہ کھربوں ڈالر آخر کہاں خرچ ہوے نیویارک ٹائمز نے پندرہ ستمبر کے اداریے میں لکھا ہے کہ ہمیں یہ بتایا گیا کہ امریکی سرمایہ افغانستان کی تعمیر و ترقی پر خرچ ہو رہا ہے But the surreal amount of cash poisoned the country instead مگر اس ماورائے حقیقت کیش نے اس ملک کو زہر آلود کر دیا اس نے امارت اور غربت کی خلیج کو وسیع کر دیا جو لوگ خالی ہاتھ تھے وہ ایک محدود طبقۂ امرا کے دشمن ہو گئے اور جیبیں بھرنے والے لوٹ مار میں جت گئے۔ افغانستان میں امریکی سرمایہ کاری پر تیار کی ہوئی سپیشل انسپکٹرجنرل کی حالیہ رپورٹ میں لکھا ہے The money spent was far more than Afghanistan could absorb اس رپورٹ کے مطابق امریکہ میں عام تاثر یہ تھا کہ افغان لوگ کرپٹ ہیںاسلئے نتائج حاصل نہیں ہو رہے جبکہ حقیقت یہ ہے کہ اس کرپشن میں امریکی کمپنیاں بھی شامل تھیں اور اس بے ہنگم انوسٹمنٹ کا نتیجہ ایک Fantasy Economy یعنی خیالی معیشت تھا جو ایک کسینو یا جوا خانے کی طرح چل رہی تھی
نیو یارک ٹائمز نے مذکورہ اداریے میں لکھا ہے کہ اس جنگ کا ایک سبق یہ ہے کہ تم ایک فوج کو خرید نہیں سکتے تم اسے صرف کچھ وقت کیلئے کرائے پر لے سکتے ہو جب پیسے کا نلکہ بند ہو جاتا ہے تو پھر تمہارے ساتھ میدان میں کوئی بھی کھڑا نہیں ہوتا اخبار نے لکھا ہے کہ گل آغا شیرازی ایک وار لارڈ تھا ہم نے اسے گورنر بنا دیا جب طالبان نے اسکے دروازے پر دستک دی تو وہ فوراً بندوق پھینک کر ان سے جا ملا
یہ تو تھی امریکی میڈیا کی فریاد اب یہی میڈیاساری دنیا کیساتھ ملکر تماشہ کر رہا ہے کہ طالبان اپنا ملک کیسے چلاتے ہیںہم جانتے ہیں کہ کسی بھی مغربی ملک نے طالبان کو ایک دھیلا بھی نہیںدینا وہ تو الٹا اس حکومت کے ناکام ہونے کا انتظار کر رہے ہیںتا کہ وہ نئے گھوڑوںپر شرط لگا سکیں خطے کے ممالک میں بھی اتنی سکت نہیں کہ وہ ایک درماندہ حال ہمسائے کی مدد کر سکیں ایسے میں تازہ اطلاعات کے مطابق چین خاموشی سے اس قحط زدہ ملک کی مدد کر رہا ہے تاکہ اسکی روز مرہ کی ضروریات پوری ہوتی رہیںدو عالمی طاقتوں نے چالیس برسوں میں اس دھرتی سے سکون اور خوشحالی چھین کر اسے ایک غیر یقینی مستقبل کے حوالے کر دیا ہے۔