امریکا نے 5 عسکریت پسندوں کو عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کردیا

392

واشنگٹن: محکمہ خارجہ نے 5 مبینہ عسکریت پسندوں کو اپنی عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کرنے کا اعلان کردیا۔

امریکی پابندیوں کی زد میں آنے والے 5 افراد کے ساتھ لین دین کرنے والے اداروں یا افراد پر بھی پابندی لگائی جاسکتی ہے۔

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے ایک بیان میں کہا کہ ان میں موزمبیق میں دہشت گرد تنظیم اسلامک اسٹیٹ سے وابستہ سینئر فوجی کمانڈر بن ماضی عمر بھی شامل ہیں۔

انٹونی بلنکن نے بتایا کہ بن ماضی عمر نے انتہا پسندوں کے ایک گروپ کی قیادت کی، جنہوں نے مارچ میں پالما قصبے کے امرولا ہوٹل پر حملے میں درجنوں افراد کو ہلاک کیا تھا۔

انٹونی بلنکن نے کہا کہ وہ موزمبیق اور تنزانیہ میں متعدد حملوں کا بھی ذمہ دار ہے۔

امریکی وزیر خارجہ نے بتایا کہ امریکی پابندیوں کی زد میں آنے والوں میں مالی میں القاعدہ سے وابستہ تنظیم نصر الاسلام والمسلمین کے سینئر رہنما سیدانج حیتا اور سالم ولد الحسن کے نام بھی شامل ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ صومالیہ میں ’الشباب‘ تنظیم کے دو کمانڈر علی محمد راجی اور عبد القادر محمد کے نام بھی عالمی دہشت گردوں کی فہرست میں شامل کیے گئے ہیں۔