اوباما کی 60 ویں سالگرہ تنقید کی زد میں آگئی

229

سابق امریکی صدر براک اوباما کی 60 ویں سالگرہ کے موقع  پر  شیڈول کی گئی تقریب تنقید کی زد میں آگئی جس کے بعد سابق صدر نے اسے محدود کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

قدامت پسندوں کی جانب سے تقریب پر تنقید کے ایک روز بعد اوباما کی ترجمان ہنا ہینکنز نے اپنے بیان میں کہا کہ  تمام عوامی ہدایات اور کووڈ 19 کے تحفظات کو مد نظر رکھتے ہوئے کئی ماہ قبل اس تقریب کو ترتیب دیا گیا تھا لیکن کورونا کی چوتھی لہر کے پیش نظر مہمانوں کی فہرست میں شامل افراد کو کم کرنے  پر نظر ثانی کی جارہی ہے۔

امریکی میڈیا کے مطابق ملک میں گذشتہ ہفتے سے کورونا وائرس کی بھارتی قسم (ڈیلٹا) کے پھیلاؤ کی وجہ سے سابق صدر اور ان کی اہلیہ نے اس تقریب میں صرف خاندان اور قریبی دوستوں کو شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ سابق صدر اوباما کی ساٹھویں سالگرہ کی تقریب جزیرہ مارتاز وین‌ یارڈ  میں بروز ہفتہ منائی جائے گی جس میں سابق اوباما انتظامیہ میں شامل حکام اور ڈیموکریٹک ڈونرز سمیت دیگر شخصیات نے شرکت کرنا تھی۔ ان مشہور شخصیات میں جارج کلونی ، اسٹیون اسپائل برگ اور اوپرا ونفری بھی شامل تھی جنہیں اب فہرست سے نکال دیا گیا ہے۔

تقریب کو  سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریوینشن کی جانب سے جاری ہدایات کے تحت سمندر کنارے منقعد کی جانی تھی اور تمام مہمانوں کیلئے ضروری تھا کہ وہ ویکسینیٹڈ ہوں اور ان کے کورونا ٹیسٹ بھی منفی ہوں لیکن اس کے باوجود کنزرویٹوز نے اس پر تنقید کی۔

اس معاملے پر ری پبلکن پارٹی سے تعلق رکھنے والے رکن کانگریس جِم جارڈن نے ٹوئٹ کی جس میں انہوں نے اوباما کا مذاق بناتے ہوئے کہا کہ ’اگر یہ سالگرہ کا جشن ٹرمپ مناتے تو ڈیموکریٹس کہتے کہ کوئی اتنا لا پرواہ کیسے ہوسکتا ہے یا یہ لوگوں کو مار رہے ہیں۔‘