کرسپر ٹیکنالوجی سے تبدیل شدہ دنیا کا پہلا گنّا تیار

64

فلوریڈا: گنّا دنیا بھر کی مقبول اورہمارے لیے ضروری فصل ہے لیکن اس کی بہترین اور ماحول دوست اقسام کی ضرورت ہمیشہ محسوس ہوتی رہی ہے۔ اب کرسپر ٹیکنالوجی کی بدولت گنّے کی ایک قسم تیارکی گئی ہے جو قدرے ماحول دوست بھی ہے۔

روایتی طریقوں سے گنّے کی نئی فصلیں تیار کرنا کوئی آسان کام نہیں ہوتا کیونکہ اس میں بہت محنت اور وقت صرف ہوتا ہے۔ اب CRISPR سی ایس نائن جین ایڈیٹنگ ٹیکنالوجی کے ذریعے بہت تیزی سے ایک بالکل نئے قسم کا گنّا اگایا گیا ہے۔گنّا شکر کی پیداوار کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔ اس کے پتےاور تنے کا تیل بایوایتھانول جیسا ماحول دوست ایندھن فراہم کرتا ہے اور غیرمضرپلاسٹک بھی دیتا ہے۔ لیکن اس کی ماحولیاتی قیمت بہت زیادہ ہوتی ہے کیونکہ گنا کاشت کا وسیع رقبہ نگل لیتا ہے جس سے جنگلات سکڑتے ہیں اور اس کی کاشت کے لیے پانی کی بڑی مقدار بھی درکار ہوتی ہے۔ گنّے کی فصل اگنے کے بعد اس کے کچرے کو ٹھکانے لگانا ایک الگ مسئلہ ہوتا ہے۔

اب کرسپربایوٹیکنالوجی کی بدولت یہ ممکن ہے کہ کسی بھی فصل اور جاندار کے مخصوص جین بند کئے جاسکتےہیں، انہیں کاٹ کر الگ کیا جاسکتا ہے یا انہیں مفید جین سے بدلا جاسکتا ہے۔ یوں کئی جینیاتی امراض ختم کرنے میں کرسپر ٹیکنالوجی نے غیرمعمولی کردار ادا کیا ہے۔

لیکن گنّے کا جین کا مجموعہ (جینوم) بہت پیچیدہ ہے کیونکہ اس میں کئی کروموسوم ہیں اور جین کی یکساں کاپیاں بار بار سامنے آتی رہتی ہیں۔ اس طرح کسی بیماری یا خرابی کی وجہ بننے والے جین کی شناخت کرنا بہت مشکل ہوجاتا ہے۔ لیکن اب یونیورسٹی آف فلوریڈا کے شعبہ جینیات اور اسی شہر میں واقع ڈی او ای سینٹر فار ایڈوانسڈ بایوپراڈکٹس نے مشترکہ طور پر کچھ مخصوص جین تلاش کئے جو گنّے کے پودے کے ظاہری خدوخال تبدیل کرسکتے ہیں۔

پہلے مرحلے میں تو سائنسدانوں نے گنّے میں ان جین کا سوئچ آف کردیا جو میگنیشیئم چیلیٹیز بنارہے تھے جو ایک اینزائم ہے  جس کی مدد سے پودا کلوروفِل بناتا ہے۔ اب اس کی کمی سے پودا رنگت کھوگیا اور اس کے پتے ہلکے سبز اور پیلے ہونے لگے۔ اس طرح ہلکا سبز گنا نائٹروجن فرٹیلائزر کا استعمال کم کرتا ہے لیکن فصل اور اس کی صحت پر کوئی اثرنہیں پڑتا۔

اسی طرح ایک اور مطالعے میں کرسپر استعمال کرتے ہوئے انفرادی نیوکلوٹائیڈز متعارف کرائے گئے تو اس سے وہ ضارکش دواؤں (ہربیسائڈز) کا بہتر مقابلہ کرنے لگے اور یوں ان پر کم دوا چھڑکنے کی ضرورت پیش آئی۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.