بھارت: مسلم خواتین کی تصاویر کی ‘جعلی نیلامی’ کے نئے اسکینڈل کا انکشاف

236

بھارت میں درجنوں مسلمان خواتین کو پولیس کو مطلع کیے بغیر آن لائن جھوٹی نیلامی میں فروخت کیلئے پیش کرنے کے واقعے کی پولیس نے تحقیقات شروع کردی ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی ‘اے ایف پی’ کی رپورٹ کے مطابق رواں ہفتے میں 80 سے زائد خواتین کی تصاویر بھارتی ویب سائٹ پر ‘سُلی ڈیل آف دی ڈے’ کے عنوان سے شائع کی گئیں، اس میں لفظ ‘سُلی’ کو مسلمان خواتین کے لیے توہین آمیز قرار دیا جارہا ہے۔

اس حوالے سے ایئر لائن میں ملازمت کرنے والی پائلٹ حنا محسن خان کو ان کے دوست نے خبردار کیا اور اس لنک کے بارے میں آگاہ کیا جہاں خواتین کی تصاویر کی گیلری موجود ہے۔

حنا محسن خان نے اے ایف پی کو بتایا کہ گیلری میں چوتھی تصویر میری تھی جس کی وہ لوگ نیلامی کر رہے تھے اور یہ ظاہر کرنے کی کوشش کر رہے تھے کہ میں ایک دن کے لیے ان کی غلام ہوں۔

انہوں نے کہا کہ یہ دیکھ کر میرا جسم منجمد ہو گیا تھا اور اس دن سے آج تک میں مسلسل غصے میں ہوں۔

بھارتی ویب سائٹ ‘گٹ حب’ کا کہنا ہے کہ اس تمام عمل میں ملوث صارفین کے اکاؤنٹس معطل کر دیے گئے ہیں کیونکہ انہوں نے ہراساں، تعصب اور تشدد کے حوالے سے ویب سائٹ کی پالیسی کی خلاف ورزی کی ہے۔

دہلی پولیس نے واقعے میں ملوث نامعلوم افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے کیونکہ انہیں تاحال ملزمان کی شناخت کا علم نہیں ہے۔

34 سالہ ثانیہ احمد نے بھی گزشتہ ہفتے ویب سائٹ پر فروخت کےلیے آویزاں اپنی تصویر دیکھی تھی۔

رپورٹ کے مطابق واقعے میں ملوث افراد صحافیوں اور سماجی کارکنان سمیت دیگر لوگوں کا تعاقب کرنے میں ماہر ہیں، ہزاروں توہین آمیز پیغامات پھیل جانے کے بعد متعدد شہری اپنے سوشل میڈیا اکاؤنٹس بند کرچکے ہیں۔

بھارت کے 17 کروڑ مسلمانوں میں سے اکثر کا کہنا ہے کہ نریندر مودی کے وزیر اعظم بننے اور قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے اقتدار میں آنے کے بعد وہ خود کو دوسرے درجے کا شہری محسوس کرتے ہیں۔