بلو رانی کو شاید علم نہیں کہ پاکستان میں ایک لاکھ گدھوں کے اضافے میں پچاس ہزار ان کی جیسی گدھیاں بھی شامل ہیں!

258

پاکستان میں اپوزیشن کے تمام تر جعلی دعوئوں اور کھوکھلے نعروں کے باوجود پی ٹی آئی کی حکومت نے واضح اکثریت کے ساتھ بجٹ پاس کروا لیا اور پیپلز پارٹی اور نوازلیگ کے اسمبلی کے ممبران بے شرمی اور ڈھٹائی کے ساتھ منہ دیکھتے رہ گئے۔ حد تو یہ ہے کہ اسمبلی کے اپوزیشن لیڈر میاں شہباز شریف بجٹ کے بل کی منظوری کے وقت ایوان میں ہی موجود نہیں تھے اور وہاں سے فرار ہونے میں ہی عافیت جانی۔ دوسری طرف پاکستان پیپلز پارٹی کے نابالغ چیئرمین بلاول زرداری جنہیں شیخ رشید پیار سے بلورانی کہتے ہیں۔ بجٹ اجلاس میں تقریر کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس حکومت کے دور میں صرف گدھوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے اور انہوں نے ایک دوسرے کا حوالہ دیا جس میں کہا گیا تھا کہ گزشتہ ایک سال میں پاکستان میں ایک لاکھ گدھوں کااضافہ ہوا ہے۔ یہ بھونڈا طرز بلاول زرداری شرما کر ہنس کر اور اٹھلا کر حکومت کے کھاتے میں ڈال رہے تھے۔ ہمیں نہیں معلوم کہ اگر انہیں اس بات کا اندازہ بھی ہے کہ ایک لاکھ گدھوں کی تعداد گدھے اور گدھی سے مل کر ہی بنتی اور بڑھتی ہے۔ ویسے آپس کی بات ہے کہ جنس کے معاملے میں بلاول زرداری کا کردارذرا مشکوک ہی ہے۔ یہ ان کی چال، ڈھال، اٹھلانا، مسکانہ اور انداز زنانہ ہی ہے جس کی بنیاد پر شیخ رشید صاحب نے انہیں بلورانی کا خطاب دیا ہوا ہے۔ پاکستان کی سیاست میں یہ وہ واحد بے نظیر لونڈا ہے جس نے زندگی میں کبھی کوئی جاب کی ہے، کبھی کوئی بزنس کیا ہے، کبھی کسی آرگنائزیشن کو چلایا ہے بس ایک پرچی کی بنیاد پر سیاسی پارٹی کا سربراہ بنا دیا گیا ہے۔ جس طرح سے پاکستان کی تاریخ گواہ ہے کہ آج تک کسی بھی مذہبی جماعت کو پاکستانی عوام نے اقتدار تک پہنچانے کیلئے منتخب نہیں کیا ہے اسی طرح سے ایک غیر ملکی ادارے نے سروے شائع کیا تھا جس کے مطابق پاکستانی عوام فی الحال کسی ہم جنس پرست وزیراعظم کو منتخب کرنے کیلئے تیار نہیں ہیں۔ شاید اس مرحلے تک پہنچنے کیلئے انہیں کم از کم مزید سو سال کا عرصہ درکار ہو گا۔ شاید اسی سروے سے متاثر ہو کر آصف علی زرداری نے اپنی دونوں بیٹیوں آصفہ زرداری اور بختاور زرداری کو بارہا لانچ کرنے کی کوشش کی مگر ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ ہم شاید اپنے پچھلے کالموں میں ذکر کر چکے ہیں کہ بلاول بھٹو زرداری کے فرسٹ کزن ذوالفقار علی بھٹو جونیئر ایک اوپن ہم جنس پرست کے طور پر دنیا بھر میں مشہور ہیں۔ ذوالفقار علی بھٹو جونیئر مقتول مرتضیٰ بھٹو کے بیٹے ہیں اور سانس فرانسکو امریکہ میں مقیم ہیں۔ جہاں تک رہی بلو بھٹو کی تو معروف امریکن بلاگر اور پاکستان میں مقیم صحافی سنتھیارچی تمام ثبوتوں اور واقعات کیساتھ اپنے ایک مضمون میں دعویٰ کر چکی ہیں کہ بلاول زرداری ایک ہم جنس پرست شخص ہیں جن کا بوائے فرینڈ جس کا تعلق امریکہ سے ہے وہ ان کے ہمراہ کراچی کے بلاول ہائوس میں ہی رہتا ہے۔ اب آپ خود ہی تصور کر لیں کہ جس ملک کے اس قسم کے سیاستدان ہوں اور وہ قومی اسمبلی میں بجٹ سیشن کے دوران بجٹ پر تبصرہ کرنے کے بجائے گدھے اور گدھیوں کی باتیں کریں تو پھر ان سے کیا توقع کی جا سکتی ہے؟