ہندو انتہا پسندی کا شکار مسلمان سے متعلق ٹوئٹ کرنے پر سوارا بھاسکر کے خلاف مقدمہ

235

ممبئی: بالی ووڈ داکارہ سوارا بھاسکر حال ہی میں وائرل ہونے والی ویڈیو جس میں ایک مسلمان بزرگ پر تشدد کیا جارہا ہے کے بارے میں ٹوئٹ کرنے پر مشکل میں آگئیں۔بالی ووڈ اداکارہ سوارا بھاسکر، صحافی عرفا خانم شیروانی، آصف خان اور ٹوئٹر انڈیا کے سربراہ منیش مہیشوری کے خلاف دہلی کے تلک مارگ پولیس اسٹیشن میں مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ یہ مقدمہ ایڈوکیٹ امیت اچاریا کی جانب سے ان تمام افراد کے خلاف ایک ویڈیو کو شیئرکرنے کے لئے درج کیاگیا ہے۔ گردش کرنے والی ویڈیو میں ایک بزرگ مسلمان شخص کا کہنا ہے کہ اسے نہ صرف مارا پیٹا گیا بلکہ اسے ’’جے شری رام‘‘ کا نعرہ لگانے کے لیے کہا گیا اور تشدد کے دوران اس کی داڑھی مونڈ دی گئی۔اداکارہ سوارا بھاسکر اور دیگر افراد کے خلاف درج ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ ان تمام لوگوں نے معاملے کی سچائی کی تصدیق کیے بغیر، عوامی امن میں خلل ڈالنے اور مذہبی گروہوں کے مابین تفریق پیدا کرنے کے ارادے سے اس ویڈیو کو فرقہ وارانہ زاویے کے ساتھ آن لائن شیئر کیا۔ ایف آئی آر بھارتی ریاست اترپردیش کے شہر غازی آباد کے لونی بارڈر پولیس اسٹیشن میں درج کروائی گئی۔