جوہری ہتھیاروں کے اخراجات میں ایک ارب 40 کروڑ ڈالر کا اضافہ ہوا، رپورٹ

27

دنیا میں جہاں کورونا کے وبائی مرض کے باعث معاشی بدحالی کے سائے منڈلارہے ہیں، وہیں ایٹمی ممالک نے گزشتہ برس ایٹمی ہتھیاروں پر مجموعی طور پر ایک ارب 40 کروڑ ڈالر اضافی خرچ کیے ہیں۔

ایک تازہ رپورٹ میں عالمی مہم انسداد نیوکلیئر ہتھیار (آئی سی اے این) نے انکشاف کیا کہ دنیا کے 9 جوہری ممالک نے ایٹمی ہتھیاروں پر اپنے اخراجات میں اضافہ کیا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ ایک طرف جہاں دنیا میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد ہسپتال میں آکسیجن گیس کی منتظر ہے اور طبی عملے کو کئی گھنٹوں تک زائد کام کرنا پڑتا ہے ادھر ان 9 ایٹمی ممالک کے پاس مجموعی طور پر 72 ارب ڈالر کے بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیار موجود ہیں۔

آئی سی اے این نے کہا کہ 2019 کے اخراجات کے مقابلے میں ایک ارب 40 کروڑ ڈالر کا اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ کے مطابق امریکانے مجموعی رقم کا نصف سے زیادہ یعنی 34 ارب 70 کروڑ ڈالر خرچ کیا۔

آئی سی اے این کے مطابق امریکا کی جانب سے خرچ کی جانے والی رقم گزشتہ برس مجموعی فوجی اخراجات کا تقریباً 5 فیصد ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.