کم عمری میں ’ریپ‘ سے حاملہ ہونے پر ذہنی توازن کھو بیٹھی تھی، لیڈی گاگا

266

شہرت یافتہ امریکی گلوکارہ، اداکارہ، پروڈیوسر، سماجی رہنما اور کاروباری خاتون لیڈی گاگا نے کہا ہے کہ کم عمری میں طاقتور شخص کی جانب سے متعدد مرتبہ ’ریپ‘ کیے جانے کی وجہ سے وہ حاملہ ہوگئی تھیں، جس کے باعث وہ تقریباً اپنا ذہنی توازن کھو بیٹھی تھیں۔

لیڈی گاگا نے شہزادہ ہیری اور اوپرا ونفرے کی جانب سے ذہنی صحت پر بنائی گئی دستاویزی سیریز ’دی می یو کانٹ سی‘ یعنی ’مجھے تم نہیں دیکھ سکتے‘ کی پہلی قسط میں اپنے ساتھ ہونے والے استحصال پر کھل کر بات کی۔

لیڈی گاگا ماضی میں بھی متعدد مرتبہ اعتراف کر چکی ہیں کہ انہیں میوزک کی دنیا میں آتے ہی جنسی استحصال کا نشانہ بنایا گیا تھا۔

سب سے پہلے لیڈی گاگا نے 2014 میں انکشاف کیا تھا کہ جب انہوں نے گلوکاری کی دنیا میں قدم رکھا اور جب ان کی عمر محض 19 برس تھی، تب انڈسٹری کے ایک شخص نے ان کا ’ریپ‘ کیا تھا۔

بعد ازاں گلوکارہ نے 2016 اور 2018 میں بھی مذکورہ معاملے پر بات کی تھی جب کہ گزشتہ سال بھی انہوں نے اسی معاملے پر کھل کر بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ 19 برس کی عمر میں متعدد مرتبہ ان کا ’ریپ‘ کیا گیا تھا۔

لیڈی گاگا نے ماضی میں بھی ’ریپ‘ کرنے والے شخص کا نام نہیں بتایا تھا اور اب تازہ سیریز میں بھی انہوں نے مذکورہ شخص کا نام لینے سے گریز کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ ’می ٹو مہم‘ کے بعد بہت ساری خواتین نے بہادری دکھائی مگر وہ اب بھی اس مکروہ شخص کا نام لینے کو تیار نہیں۔