غزہ پر اسرائیلی بمباری، امریکی صدر نے پہلی مرتبہ سیز فائر کی حمایت کردی

352

امریکی صدر جو بائیڈن نے اسرائیلی وزیراعظم بینجمن نیتن یاہو کو ہفتے میں دوسری مرتبہ ٹیلیفونک کال کرتے ہوئے غزہ میں جاری اسرائیلی بمباری کو روکنے کے لیے پہلی مرتبہ سیز فائر کی حمایت کی ہے۔

بائیڈن نے پیر کو اسرائیلی وزیر اعظم سے ٹیلیفون پر رابطہ کیا اور سیز کے قیام کے لیے کوششیں کرنے پر زور دیا۔

واضح رہے کہ عالمی طاقتیں اور انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے جو بائیڈن پر غزہ میں سیز فائر کرانے کے لیے دباؤ مسلسل بڑھتا جا رہا تھا۔

خبر رساں ایجنسی رائٹرز کے مطابق پیر کو وائٹ ہاؤس سے جاری بیان میں جو بائیڈن نے کہا کہ وہ سیز فائر کی حمایت کرتے ہیں اور اس تنازع کے خاتمے کے لیے مصر سمیت دیگر فریقین سے بات کررہے ہیں۔

تاہم سیز فائر کے مطالبے کے ساتھ ساتھ امریکی صدر نے اپنے سابقہ مؤقف کو دہراتے ہوئے حماس کے مبینہ راکٹ حملوں کے خلاف اسرائیل کے اپنے دفاع کے حق کی بھرپور حمایت بھی کی۔

ایک دن قبل نیتن یاہو نے کہا تھا کہ اسرائیلی فوج غزہ کی پٹی پر مکمل طاقت کے ساتھ کارروائی کا سلسلہ جاری رکھیں گی۔

غزہ کی پٹی پر 10 مئی سے جاری اسرائیلی فضائی حملوں میں اب تک کم از کم 212 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں جبکہ بمباری کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر ہونے والی تباہی کے باعث ہزاروں فلسطینی بے گھر اور نقل مکانی پر مجبور ہو گئے۔