اسرائیل ‘دہشت گرد’ ریاست ہے، طیب اردوان

217

ترک صدر رجب طیب اردوان نے فلسطینی نوجوانوں پر مسجد اقصیٰ میں ربڑ کی گولیاں فائر کرنے، گرینیڈ سے حملوں اور تشدد پر اسرائیل کو دہشت گرد ریاست قرار دے دیا۔

رجب طیب اردوان نے کہا کہ انقرہ نے اس واقعہ پر عالمی اداروں کو جھنجوڑنا شروع کردیا ہے۔

خیال رہے کہ جمہ کے روز مسجد اقصیٰ اور مشرقی بیت المقدس میں اسرائیلی پولیس کی فائرنگ سے 205 فلسطینی نوجوان زخمی ہوگئے تھے جبکہ اسرائیل کے 16 پولیس اہلکاروں کے زخمی ہونے کی اطلاعات ملی تھیں۔

بعد ازاں ہفتے کی شب بھی اسرائیلی فورسز نے مسجد اقصیٰ کے قریب عبادت کے لیے جمع ہونے والے فلسطینوں پر حملہ کرکے 80 افراد کو زخمی کردیا تھا۔

مذکورہ واقعے کے بعد فلسطینوں کے حقوق اور یہودی آباد کاروں کی جانب سے مقامی فلسطینینیوں کو بے دخل کرنے کے حوالے سے شدید تشویش کا اظہار کیا گیا تھا اور سوشل میڈیا پر اسرائیلی پولیس کے حملوں کی ویڈیوز بھی وائرل ہوگئی تھیں۔

دوسری جانب اسرائیل کی سپریم کورٹ بھی اس معاملے پر سماعت کرے گی۔

استنبول میں ایک تقریب سے خطاب کے دوران ترک صدر رجب طیب اردوان نے تمام مسلمان ممالک اور عالمی برادری سے اسرائیل کے حوالے سے ‘مؤثر اقدامات’ کرنے کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ جو ان ظالمانہ واقعات پر خاموش ہیں وہ پارٹی ہیں۔

ترک صدر کا کہنا تھا کہ ‘ظالم، دہشت گرد ریاست اسرائیل بے رحمی اور غیر اخلاقی طور پر بیت المقدس میں مسلمانوں پر حملہ آور ہے’۔

ان کا کہنا تھا کہ ترکی نے اقوام متحدہ، اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) اور تمام متعلقہ عالمی اداروں کو فوری کارروائی کرنے کا مطلبہ کرتے ہوئے ضروری اقدامات اٹھائیں ہیں۔