جھوٹ، مکاری اور دغا بازی !پتہ نہیں پاکستان پر آسمان کس کی نیکیوں سے سایہ فگن ہے؟

235

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ عمران خان کو صحت کلی عطا فرمائے۔ آمین ثمہ آمین)
؎تم جیو ہزاروں سال
ہر سال کے دن ہوں پچاس ہزار!
اللہ تعالیٰ کو اس ملک کو بچانا ہے تو حق کو قوت عطا کرے گا۔ دنیا کی تاریخ گواہ ہے کہ باطل کثیر تعداد میں ہوتا ہے اور حق قلیل تعداد میں۔ تمام اولیا اللہ جو پیام حق لیکر دنیا میں آئے تو بندوں تک پہنچانے میں انہیں کتنی مصیبتوں کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ دنیا سے چلے گئے مگر ان کا پیغام باقی رہا اور رہتی دنیا تک باقی رہے گا؎
باطل سے دبنے والے اے آسماں نہیں ہم
سو بار کر چکا ہے تو امتحاں ہمارا!
تو اے وطن کے محب وطن نوجوانوں! اس ملک کی باگ ڈور تمہیں سنبھالنی ہے۔ سچ بولو۔ اپنی خفیہ صلاحیتوں کو بروئے کار لائو۔ راتوں رات امیر بننے کے خواب مت دیکھو، محنت کرو ، آگے بڑھو، تعلیم تمہارا سب سے بڑا ہتھیار ہونا چاہیے۔ ان لوگوں کی پیروی مت کرو جنہوں نے لوٹ مار کر کے راتوں رات محلات کھڑے کر لئے۔ یہ دنیا میں بھی ذلیل و خوار ہوں گے۔ عاقبت کا نتیجہ بھی سامنے ہے۔ رزق حلال ہی انسان کو سکون، طمانیت اور عزت دیتا ہے۔ اپنی خوداریوں کا سودا مت کرو۔ اپنے ضمیر کو فروخت مت کرو۔ وہ لوگ جو نقل کر کے امتحانوں میں پاس ہوئے یا جعلی ڈگریوں سے نوکریاں حاصل کیں یقین جانوانہوں نے اپنے ساتھ بڑا ظلم کیا۔ ذرا سے فائدے کے لئے اپنی ذہنی صلاحیتوں کو زنگ آلود کر دیا۔ اپنی صلاحیتوں پر بھروسہ کرنے سے ہی خود اعتمادی پیدا ہوتی ہے۔ ایسے بنو کہ تمہیں اللہ تعالیٰ کے سوا کسی کے آگے سر نہ جھکانا پڑے۔
تمہیں اللہ تعالیٰ نے ایک مخلص محب وطن لیڈر دیا ہے۔ یہ ضرور یہ ہے کہ وہ کوئی خاندانی سیاستدان نہیں جیسا کہ پاکستان میں ایک وطیرہ بن گیا ہے۔ نہ وہ بہت دولت مند ہے۔ نہ وہ مردہ ضمیر ہے کہ دوسروں کی خوداریاں خریدتا پھرے۔ یہ ضرور ہے اُسے صاف ستھرے سچے لوگوں کے چنائو میں مشکلات کا سامنا ہے۔ پچھلی حکومت جو مظالم عوام پر ڈھا گئی اس ملبے کو ہٹانے میں وقت لگے گا۔ عوام جس کرب سے گزررہے ہیں اس کا حکومت کو بخوبی احساس ہے لیکن معیشت کو پٹڑی پر لانے میں وقت لگے گا۔
پھولن دیوی جو اپنا جوکروں کا سرکس لئے گھوم رہی ہیں اور عوام کی اذیت کا دکھ انہیں کھائے جارہا ہے ۔ یہ ناسمجھ بد احساس عورت اپنے بھگوڑے بزدل چور باپ سے یہ نہیں کہتی ہے ’’بابو جی! ان غریبوں پر اب تورحم کھائو، اس ملک نے تمہیں تین دفعہ وزیراعظم بنایا، یہاں عوام کو بیوقوف بنا کر تم لوٹتے رہے ان کے ووٹوں سے وزارت کی کرسی پر براجمان رہے‘‘ تمہاری دختر بداختر بھی اب یہ فرما رہی ہیں کہ دنیا پوچھ رہی ہے کہ جب کرپشن ثابت نہ ہوئی تو ’’کیوں نکالا‘‘ وہ بھی یہ نعرہ لگارہی ہے۔ پتہ نہیں یہ آسمان کس کی نیکیوں سے سایہ فگن ہے ورنہ ٹوٹ پڑتا۔ اتنا جھوٹ، اتنی مکاری، اتنی دغا بازی پھولن دیوی دنیا تمہاری مکاریوں پر حیرت زدہ ہے۔ تم کتنا بھی چوری کے پیسے سے لباسِ فاخرہ پہن لو، چور ہی رہو گی۔
ایک جج نے کہا تھا ’’ڈائن بھی سات گھر چھوڑ کر حملہ کرتی ہے‘‘ مگر تم تو ایسی ڈائن ہو کہ تم نے اپنے ہی ملک کو نگل لیا۔ خدا کے واسطے اب اس ملک کو ڈسنا چھوڑ دو۔ بائو جی سے کہو پیسہ واپس کریں اورتمہیں اپنی حفاظت میں لے لیں۔ جلسوں میں جس طرح تم آتی ہو بڑا بازاری پن سا جھلکتا ہے۔ لوگ تمہارے مصنوعی حسن کا نظارہ کرنے آجاتے ہیں ورنہ تمہارا نہ کوئی ایجنڈا ہے نہ کوئی لائحہ عمل۔ گھر بیٹھو پھولن دیوی تمہارے باپ کو شرم آنی چاہیے جس نے تمہیں بے نتھے بیل کی طرح معاشرے میں ذلیل ہونے کے لئے چھوڑ دیا ہے۔ جہاں کبھی تمہیں لاتیں پڑتی ہیں کبھی مکے لگتے ہیں اور تمہارے وہ مداری احسن اقبال، خواجہ آصف، طلال چودھری ،رانا ثناء اللہ، ڈگڈی بجاتے تمہارے ساتھ ہوتے ہیں۔ تم سمجھتی ہو تمہیں بڑی پذیرائی مل رہی ہے اُم الفساد یہ تمہارے ساتھ اس لئے ہیں کہ تمہارے ساتھ ساتھ اپنا بھی لوٹ کا مال بچا سکیں۔
ایک مولوی صاحب نے سپہ سالار کو مخاطب کرتے ہوئے ایک کہاوت بیان کی ’’بزرگ کہندے سی کہ پتر جدوں کتا ہلکا ہو جاو تو انوں مار چھڈو‘‘ (یعنی کتاجب پاگل ہو جائے تو اسے مار دو) بیشتر ملکوں نے اپنے ملک سے کرپشن ختم کرنے کے لئے کرپٹ گروہوں کا خاتمہ کر دیا۔ اسلامی قانون کی بات کرو تو سعودی عرب میں سنگین جرائم کی سزا عوام کے سامنے گردن زدنی ہے تو پھر پاکستان میں سر عام پھانسی کی سزا کیوں نہیں دی جاسکتی؟
عزیز ہم وطنوں، محب وطن پاکستانیوں، خصوصاً نوجوان نسل جس کے ہاتھوں میں اس ملک کی باگ دوڑ آئے گی۔ تم ہی اس ملک کے محافظ ہو۔ ایک فوجی کی سوچ پیدا کرو۔ جو مادر وطن کی عزت اور حرمت پر ہر وقت جان دینے کو تیار رہتا ہے۔ آزادی ایک بہت بڑی نعمت ہے۔ یہ تھالی میں رکھ کر کسی کو نہیں مل جاتی بلکہ اس کے لئے قیمتی جانوں کا نذرانہ دینا پڑتا ہے۔ ہجرت کرنی پڑتی ہے، مال و جائیداد چھوڑنی پڑتی ہیں۔ یہ ملک بھی اسی طرح حاصل ہوا ہے۔ اس کی قدر کرو۔ اللہ تعالیٰ نے اسے ہر نعمت سے نوازا ہے۔ کوئی دن ایسا ہو جب پورا پاکستان نعرۂ تکبیر بلند کرے۔ پھر پاک فوج زندہ باد اور پاکستان پائندہ باد کی صدا بلند کرے۔
نوجوانوں!سنو
اس قوم کو شمشیر کی حاجت نہیں رہتی
ہو جس کے جوانوں کی خودی صورتِ فولاد!