لداخ کے معاملے میں معاہدہ چین کی کامیابی ہے:راہول گاندھی مودی پر برس پڑے

297

بھارتی حزب اختلاف کے رہنما راہول گاندھی نے کہا ہے کہ نریندرا مودی نے مقبوضہ لداخ کی زمین چین کے حوالے کر دی ہے۔ یہ معاہدہ چین کی کامیابی ہے، انڈیا کی نہیں۔ انڈیا کی فوج چین کا سامنا کرنے کے لیے تیار ہے لیکن وزیراعظم تیار نہیں۔

راج ناتھ سنگھ نے اس معاہدے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ میں اس ایوان کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ چین سے اس معاہدے میں انڈیا نے کچھ بھی نہیں کھویا ہے۔

راہول گاندھی نے راج ناتھ سنگھ کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ نریندرا مودی نے اپنی زمین چین کو دیدی اور اپنی زمین پر مزید پیچھے ہٹ گیا ہے۔ پینگونگ جھیل کے کنارے ہماری زمین ’فنگر 4‘ تک ہے۔ نریندرمودی نے فنگر 3 سے فنگر 4 تک کی زمین چین کے حوالے کر دی ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے وزیراعظم پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ چینی فوج مقبوضہ لداخ میں تھی وہ ڈیپسانگ میں تھے۔ وہ پینگونگ میں تھے۔ بھارتی فوج ہر خطرہ مول لے کر کیلاش رینچ تک پہنچ پائی تھی۔ اب وزیراعظم نے یہ زمین بھی چین کو دے دی ہے۔ یہ صد فیصد بزدلی ہے اور وزیراعظم بزدل ہیں ۔ وہ چین کا سامنا کرنے کی جرات نہیں رکھتے۔ وہ ہماری فوج کی قربانیوں کے ساتھ دھوکہ کر رہے ہیں۔ اس معاہدے کے تحت انڈیا نے صرف دیا ہے اور چین سے حاصل نہیں کیا۔

انھوں نے کہا کہ دیپسانگ کے عسکری اہمیت کے علاقے سے چینی فوجی کیوں پیچھے نہیں ہٹے۔ وہ گوگرا اور ہاٹ سپرنگ میں موجود ہیں، وہ وہاں سے پیچھے کیوں نہیں ہٹے؟