امن مذاکرات کا نیا مرحلہ

230

بائیڈن انتظامیہ نے ابھی تک افغان مذاکرات کے بارے میں کوئی پالیسی سٹیٹمنٹ نہیں دی مگر واشنگٹن سے کابل تک مختلف فورمز پر ہونیوالی گفتگو سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ امریکہ طالبان تعلقات کا منظر نامہ تبدیل ہو گیا ہے واشنگٹن اور کابل میں حکام کے مابین گذشتہ ہفتے ہونیوالے مختلف رابطوں سے جو حقائق سامنے آئے ہیں ان سے پتہ چلتا ہے کہ ٹرمپ طالبان ہنی مون پیرٰیڈ ختم ہو گیا ہے اور اب بائیڈن حکومت کا جھکائو واضح طور پر اشرف غنی حکومت کی طرف ہے نئے صدر کی فارن پالیسی ٹیم اس بات کو کلیدی اہمیت کا حامل سمجھتی ہے کہ طالبان کو پر تشدد کاروائیاں ختم کر دینی چاہئیںیہ ابھی واضح نہیں ہوا کہ اگر طالبان نے یہ شرط تسلیم نہ کی تو کیا امریکہ مذاکرات ختم کر دیگا صدر بائیڈن کیلئے اس سمت میں پیشرفت اسلئے مشکل ہو گی کہ وہ صدارت سنبھالنے سے پہلے اور بعدمیں بھی امریکہ کی نا تمام جنگوں کو ختم کرنے کا وعدہ کر چکے ہیں انتخابی مہم کے دوران انہوں نے امریکہ کی عسکری طاقت کے استعمال کی مخالفت کرتے ہوے کہا تھا I will end the forever wars انتیس جنوری کو واشنگٹن کے والٹر ریڈ نیشنل ملٹری میڈیکل سینٹر میں زخمی فوجیوں سے بات چیت کرتے ہوے نئے صدر نے کہا کہ انہوں نے جنگ کی تباہ کاریوں کو بہت قریب سے دیکھا ہے اس موقع پر موجود ڈاکٹروں اور میڈیکل سٹاف سے مخاطب ہو کر انہوں نے کہا کہ ’’ آپ لوگوں نے میری فیملی کیلئے بہت کچھ کیا ہے میرا بیٹا بیو بائیڈن ایک سال تک عراق میں ڈیوٹی دینے کے بعد glioblastoma ( برین کینسر کی ایک قسم) میں مبتلا ہو گیا تھا اس مشکل وقت میں آپ نے میرا بہت ساتھ دیا تھا ‘‘ صدر بائیڈن نے کہا You took care of him in his final days, with great grace and dignity صدر امریکہ نے اپنی نئی ذمہ داریوں کا ذکر کرتے ہوے کہا کہ اب انہیں جنگوں کو جاری رکھنے یا ختم کرنے کے مشکل فیصلے کرنے ہیں
امریکہ میں خارجہ پالیسی سے متعلق فیصلے ہمیشہ سیاسی جماعتوں کی سطح پر ہوتے رہے ہیں دونوں بڑی جماعتیں ہمیشہ صدارتی الیکشن سے پہلے ہی داخلہ اور خارجہ پالیسیوں کے بارے میں اہم فیصلے کر لیتی ہیںبعد ازاں نیا صدر بدلتے ہوے حالات کی روشنی میں اپنے صلاح کاروں سے مشورہ کرکے پہلے سے طے شدہ پالیسی میں ردو بدل کر لیتا ہے ڈونلد ٹرمپ نے تمام حکومتی معاملات کو اپنی پسند نا پسند اور تعصبات یا پھر چند قریبی مشاہیر کے مشوروںتک محدود کردیا تھا جو بائیڈن کی فارن پالیسی ٹیم نے انتخابی مہم کے دوران ہی کہہ دیا تھا کہ افغان مذاکرات کو جاری رکھنے کیلئے پر تشدد واقعات کا ختم ہونااور افغانستان میں امن کا قیام نہایت ضروری ہے اب جو بائیڈن اس لحاظ سے ایک دوراہے پر کھڑے ہیں کہ وہ اگر افغان جنگ کو ختم کرنیکے وعدے کو پورا کرتے ہیں تو انہیں ڈونلڈ ٹرمپ کی طرح طالبان حملوں کو نظر انداز کرتے ہوے مذاکرات جاری رکھنا پڑیں گے یا پھر مذاکرات کو تشدد کے خاتمے سے مشروط کرنا ہوگا دوسری صورت میں طالبان دوحا مذاکرات کو ختم کرنیکا اعلان کر سکتے ہیں یہ طالبان اور جو بائیڈن دونوں کیلئے ایک مشکل فیصلہ ہو گا دونوں فریق ایک سال تک وقتاً فوقتاً جاری رہنے والی بات چیت کو ختم کرکے میدان جنگ میں ایک دوسرے کے خلاف صف آرا نہیں ہونا چاہتے مگر طالبان تشدد ختم کرنے پر آمادہ نہیں وہ ایک عرصے سے کابل میں عبوری حکومت کے قیام کا مطالبہ کر رہے ہیں اور جو بائیڈن انکے مطالبات تسلیم کرنے پر رضامند نہیںہیں بائیڈن کی جنگوں کو ختم کرنے سے جذباتی وابستگی اپنی جگہ مگر وہ افغان جنگ کے اختتام کا فیصلہ ڈیمو کریٹک پارٹی کی پہلے سے طے شدہ پالیسی کے مطابق کرنا چاہتے ہیںیہ فیصلہ کیونکہ مشکل ہے اسلئے وہ فی الحال جنگ و امن کے معاملے پر انشراح صدر سے گفتگو کرنے سے گریز کر رہے ہیں مگر گھڑی کی سوئیاں ٹک ٹک کر رہی ہیں انکے پاس وقت زیادہ نہیں ہے گذشتہ سال انتیس فروری کے معاہدے کے مطابق امریکہ نے یکم مئی سے پہلے افغانستان سے اپنی افواج کا انخلا مکمل کرنا ہے
دوحا مذاکرات میں ایک اہم موڑ اسوقت آیا جب جمعرات کے روزپینٹا گون کے ترجمان جان کربی نے ایک نیوز کانفرنس میں کہا کہ طالبان اگر معاہدے کے مطابق افغان نیشنل فورسز پر حملے بند نہیں کرتے تو ہمارے لئے مذاکرات کے راستے پر چلنا دشوار ہو جائیگا اسکے ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ But we are still committed to that اسکے جواب میں اگلے دن طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ جان کربی کے الزامات بے بنیاد ہیں ‘ اب سوال یہ ہے کہ جان کربی کے کونسے الزامات بے بنیاد ہیں طالبان ملک بھر میں حملے تو کر رہے ہیں اور ہلاکتیں بھی آئے روز ہو رہی ہیںاس سوال و جواب کا جو مطلب بھی ہو یہ ظاہر ہو چکا کہ امریکہ طالبان اختلافات کھل کر سامنے آگئے ہیں ان حالات میں افغان مذاکرات کے مستقبل کے بارے میں کوئی حتمی بات نہیں کی جا سکتی پینٹا گون کے ترجمان کے مطابق امریکہ کیلئے مشکل ترین مرحلہ طالبان کے پانچ ہزار قیدیوں کی رہائی تھی جس پر افغان حکومت کو آمادہ کرنا آسان نہ تھا مگر یہ مشکل مرحلہ طے کر کے امریکہ نے جنگ کے خاتمے سے اپنی کمنٹمنٹ کا ثبوت دے دیا اب امریکہ افغانستان میں تشدد کا خاتمہ کر کے طالبان کی کابل حکومت میں شرکت کیلئے راہ ہموار کرنا چاہتا ہے
اسوقت افغانستان میں باقی رہ جانیوالی امریکی افواج کی تعداد 2500 ہے اب اگر امریکہ معاہدے کے مطابق یکم مئی تک انخلا مکمل نہیں کرتا تو طالبان اسکے جواب میں تشدد کے واقعات میں اضافہ کر دیں گے بائیڈن حکومت یہ بھی کہہ رہی ہے کہ طالبان نے ابھی تک معاہدے کے مطابق دہشت گرد گروپوں سے اپنے تعلقات ختم نہیں کئے دوحا مذاکرات اسلئے بھی تعطل کا شکار ہوتے نظر آرہے ہیں کہ صدر بائیڈن کے مشاہیر نے میڈیا رپورٹس کے مطابق یہ بھی کہا ہے کہ This agreement is conditioned based یعنی کہ یہ معاہدہ بعض شرائط کی بنیاد پر کیا گیا ہے اگر طالبان یہ شرائط پوری نہیں کرتے تو اس صورت میں افغانستان میں امریکی افواج کے قیام میں توسیع کی جا سکتی ہے چند روز پہلے نیشنل سیکیورٹی ایڈ وائزر Jake Sullivan نے کابل میں اپنے ہم منصب حمداللہ محب کیساتھ ایک گھنٹہ فون پر بات چیت کے دوران انہیں اپنے مکمل تعاون کا یقین دلایا اسکے علاوہ بدھ کے روز طالبان کے ڈپٹی لیڈر ملا عبدلغنی برادرنے تہران میں جہاں انکا پر تپاک استقبال کیا گیا کہا کہ طالبان امریکہ پر اعتماد نہیں کرتے اور وہ کسی بھی ایسے گروہ کا مقابلہ کر سکتے ہیں جو امریکہ کے خریدے ہوے کرائے کے قاتلوں کا کردار ادا کر رہا ہے افغان جنگ کے اس بدلتے ہوے منظر نامے پر مزید بات اگلے کالم میں ہو گی