خلیج میں بڑھتی ہوئی کشیدگی پر ایران کی میزائل مشقوں کی تیاری

37

ایران کے سرکاری ٹیلی وژن نے رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ ملکی بحریہ خلیج عمان میں شارٹ رینج میزائل مشقوں کے لیے تیار ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایک ایسے وقت میں جب تہران کے جوہری پروگرام کے سلسلے میں امریکا نے ایران کے خلاف مہم تیز تر کر دی ہے،ایرانی بحریہ کے اس مشق کا اعلان غیر معمولی اہمیت کا حامل ہے۔

ایران کے مختصر فاصلے تک مار کرنے والے میزائل کی اس دو روزہ مشقوں کا انعقاد خلیج کے جنوب مشرقی پانیوں میں ہونا ہے اور اس میں دو نئے ایرانی ساختہ بحری جنگی جہازوں کی شمولیت متوقع ہے۔ جنوبی ایران کے ساحلی علاقے میں میزائل لانچ کے لیے ایک لاجسٹک بحری جہاز ایک ہیلی کاپٹر پیڈ کے ساتھ تعینات کیا گیا ہے۔

2018 ء میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے یکطرفہ طور پر ایران کے جوہری معاہدے سے دستبرداری کا اعلان کیا تھا۔ اس معاہدےکے تحت تہران نے خود پر لگی معاشی پابندیوں کے خاتمے کے بدلے میں یورینیم افزودگی کو محدود کرنے پر اتفاق کر لیا تھا۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے تب ایران کے بیلیسٹک میزائل پروگرام کو بھی دیگر امور میں شامل کر کے انہیں نیوکلیئر ڈیل سے دستبرداری کا جواز بنا کر پیش کیا تھا۔

جب امریکا نے ایران پر پابندیاں بڑھا دیں تو ایران نے آہستہ آہستہ اور عوامی طور پر جوہری معاہدے کی شرائط کو ترک کرنا شروع کر دیا، جس کے نتیجے میں سلسلہ وار ایسے واقعات رونما ہوئے، جنہوں نے دونوں ممالک کو گزشتہ برس کے آغاز میں ہی تقریباً جنگ کے دھانے پر لا کھڑا کیا تھا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.