برطانیہ، یورپی یونین بریگزٹ ڈیل کیلئے ‘لمبا سفر طے’ کرنے پر رضا مند

379

برسلز: وزیر اعظم بورس جانسن اور یورپی یونین کے سربراہ ارسلا وان ڈیر لیین کی جانب سے جڑنے یا ٹوٹنے کی حتمی تاریخ کو ترک کرنے پر رضامندی کے بعد برطانوی اور یورپی مذاکرات کاروں کو دوبارہ کام پر بھیج دیا گیا۔

دونوں نے گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ وہ فیصلہ کریں گے کہ اتوار کے آخر تک معاہدہ ممکن ہے یا نہیں تاہم کراس چینل بحران کال کے بعد انہوں نے ‘لمبا سفر طے’ پر اتفاق کیا۔

وان ڈیر لیین نے ایک ویڈیو پیغام میں جانسن کے ساتھ اتفاق رائے پر مشترکہ بیان کو پڑھتے ہوئے کہا کہ ‘آج صبح ہمارے درمیان ایک مفید ٹیلی فونک رابطہ ہوا، ہم نے بڑے حل طلب موضوعات پر تبادلہ خیال کیا’۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘ہماری مذاکرات کرنے والی ٹیمیں حالیہ دنوں میں دن رات کام کر رہی ہیں’۔

یوروپی یونین کے مشیل بارنیئر اور برطانیہ کے ڈیوڈ فراسٹ نے ہفتے کی رات اور اتوار کی صبح میں بات چیت کی تھی۔

ان کے دارالحکومتوں میں تبادلے ہوتے رہتے ہیں تاہم ایک یورپی عہدیدار نے کہا کہ اس وقت وہ برسلز میں ہی رہیں گے۔

اپنے مشترکہ بیان میں دونوں رہنماؤں نے کہا کہ ‘ہم نے اپنے مذاکرات کاروں کو بات چیت جاری رکھنے اور یہ دیکھنے کے لیے پابند کیا ہے کہ کیا اس مرحلے پر بھی کوئی معاہدہ طے پاسکتا ہے’۔

تاہم اپنے لیے بات کرتے ہوئے بورس جانسن نے کہا کہ جہاں برطانیہ کے رواں سال کے آخر میں یورپی یونین کی ایک مارکیٹ کو چھوٹنے میں تین ہفتوں کے باقی رہنے پر معاہدے یقینی ہونے سے بہت دور ہے’۔