چین کی خلائی سفر کی ٹیکنالوجی میں اہم ترین کامیابی

23

چین نے خلائی سفر کے حوالے سے اہم پیشرفت کرتے ہوئے دوبارہ قابل استعمال اسپیس کرافٹ کی محفوظ لینڈنگ میں کامیابی حاصل کرتے ہوئے اسے خلا میں آنے جانے کا آسان اور سستا طریقہ کار قرار دیا ہے۔

یہ اسپیس کرافٹ 4 ستمبر کو روانہ ہوا اور زمین کے مدار میں 2 دن گزار کر 6 ستمبر کو واپس لینڈ کرگیا۔

اس خلائی جہاز کے بارے میں زیادہ تفصیلات سامنے نہیں آسکی ہیں یہاں تک کہ بنیادی ڈیزائن بھی معلوم نہیں۔

اس کی کوئی تصویر یا خاکہ بھی موجود نہیں، بس یہ افواہیں ہیں کہ یہ امریکا کے ایکس 37بی سے ملتا جلتا اسپیس کرافٹ ہے۔

ساؤتھ چائنا مارننگ پوسٹ کی ایک رپورٹ میں ذرائع کا کہنا تھا کہ وہ مشن کے بارے میں تفصیلات تو نہیں بتاسکتے ہیں مگر آ کو امریکا کے ایکس 37 بی کو ایک نظر دیکھنا چاہیے۔

ایکس 37 بی ایسا خلائی جہاز ہے جو امریکی اسپیس شٹل کے ایک چوتھائی حجم کے برابر ہے، جو خلا میں جانے اور پھر زمین پر رن وے پر اترنے کی صلاحیت رکھتا ہے، جسے مرمت کرکے دوبارہ استعمال کیا جاسکتا ہے۔

امریکی فضائیہ کے مطابق ایکس 37 بی ایک تجرباتی پروگرام ہے جو دوبارہ قابل استعمال خلائی ٹیکنالوجیز کے استعمال کی عکاسی کرتا ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.